جمہوری حق

ن لیگ کے بھی کان کھڑے ہوئے۔ وہ کان جن پر کبھی جوں نہیں رینگتی تھی کیونکہ انہیں یقین تھا کہ پنجاب ان کی ذاتی جاگیر میں تبدیل ہو چکا ہے اور کوئی ان کے رنگ میں بھنگ ڈالنے کا سوچ بھی نہیں سکتا۔ فرسٹ جنریشن راجاؤں کی رعونت اور اجارہ داری اپنے عروج پر تھی کہ اچانک کھلاڑی اور شکاری نے مینار پاکستان پر چودہ طبق روشن کر دیئے۔ اجارہ داری کی فصیل میں دراڑیں پڑنے لگیں تو کہرام مچ گیا۔ ہر زبان پر ”یوتھ“ کا ورد تھا سو تاجران سیاست نے جگہ جگہ ”لیپ ٹاپوں“ اور ”سولر لیمپوں“ کی دکانیں کھول دیں۔ مال مفت دل بے رحم، حلوائی کی دکان پر دادا جی کی فاتحہ کہ اسی لئے تو اقتدار سے اتنا پیار ہے کہ پورا خاندان اس کاروبار میں ملوث جس میں ہینگ لگے نہ پھٹکڑی اور رنگ بھی چوکھا آئے۔ پروٹوکول، طمطمراق، عوام کے مال پر سکیورٹی، سڑکوں پر ”قانونی قبضے“ تو اس شاپنگ کے معمولی جھونگے ٹھہرے، معاملہ صرف سولر لیمپوں اور لیپ ٹاپوں تک ہی محدود نہ تھا بلکہ دیگر سکیموں تک لامحدود… ”یوتھ“ کی تو جیسے لاٹری نکل آئی لیکن سب جانتے تھے کہ ہر مہربان حرکت کے پیچھے عمران خان کا خوف ہے کہ راجواڑہ ہاتھ سے نکلا جاتا ہے حالانکہ وہ تو نکل ہی چکا تھا لیکن ہاتھ پاؤں مارنا تو ہر ڈوبتے ہوئے کا جمہوری حق ہے

About Abdul Rehman Sandhu

A change is Must for survival of Pakistan. Let's put hands together to bring Change.
This entry was posted in Updates. Bookmark the permalink.

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s